ہوم / بین الاقوامی / امریکہ نے زیر تربیت سعودی فوجیوں کو ملک چھوڑنے کا حکم دے دیا

امریکہ نے زیر تربیت سعودی فوجیوں کو ملک چھوڑنے کا حکم دے دیا

امریکہ میں سعودی عرب کے زیر تربیت 21 فوجیوں کو فوری طور پر امریکہ سے نکل جانے کا حکم دے دیا گیا ہے۔ امریکی اٹارنی جنرل ولیم بار نے کہا ہے کہ اگرچہ زیر تربیت فوجیوں کا دسمبر میں ایک امریکی فوجی اڈے پر فائرنگ واقعے سے تعلق نہیں ہے لیکن زیر تربیت فوجیوں کے قبضے سے جہادی مواد اور بچوں کی نازیبا تصاویر برآمد ہوئی ہیں۔ واضح رہے کہ دسمبر میں سعودی عرب کے ایک زیر تربیت فوجی نے امریکی فوجی اڈے پر فائرنگ کر کے تین امریکی فوجیوں کو مار دیا تھا۔ جوابی فائرنگ میں سعودی فوجی بھی مارا گیا تھا۔ اس حملے کے بعد امریکہ میں زیر تربیت سعودی فوجیوں کی امریکی اڈوں پر داخلے پر پابندی عائد کر دی تھی تاہم اب امریکہ نے تمام سعودی فوجیوں کو واپس بھیجنے کا اعلان کر دیا ہے۔ امریکی اٹارنی جنرل نے دسمبر میں امریکی نیول ایئر اسٹیشن پین سیکولا پر فائرنگ کے واقعے کو دہشت گردی قرار دیا ہے۔ انہوں نے امریکی موبائل کمپنی ایپل سے کہا ہے کہ وہ حملہ آور سعودی فوجی کے موبال کو اَن لاک کرے۔ فائرنگ کرنے والے سعودی فوجی نے اپنے ایپل موبائل فون کو گولی مار کر توڑ دیا تھا تاکہ اس میں موجود ڈیٹا ختم کیا جا سکے۔ ایف بی آئی نے اس تباہ شدہ موبائل کا ڈیٹا دوبارہ حاصل کر لیا ہے۔

The attack last month occurred at the Naval Air Station Pensacola, Florida


امریکی اٹارنی جنرل نے کہا ہے کہ اپل کمپنی کو درخواست بھیج دی گئی ہے تاہم وہاں سے ابھی کوئی جواب نہیں ملا ہے۔ نیویار ٹائمز کے مطابق ایپل نے حملہ آور کے آن لائن اکاوٗنٹ کی تفصیلات ایف بی آئی کو دے دی ہیں لیکن فون اَن لاک کرنے سے انکار کر دیا ہے کیونکہ اس سے کمپنی کے اِنکرپشن سوفٹ ویئر کو نقصان پہنچنے کا خدشہ ہے۔ امریکی اٹارنی جنرل کے مطابق سعودی عرب کے زیر تربیت 17 فوجی آن لائن دہشت گردی مواد کو ڈاوٗن لوڈ کرنے میں ملوث پائے گئے ہیں جبکہ بیشتر فوجیوں کے موبائل فون میں بچوں کی نازیبا تصاویر بھی ملی ہیں۔

Airman Mohammad Sameh Haitham (left) and ensign Joshua Kaleb Watson

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے