اہم ترین
ہوم / بین الاقوامی / عالمی عدالت انصاف نے میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کی نسل کُشی روکنے کا حکم دے دیا

عالمی عدالت انصاف نے میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کی نسل کُشی روکنے کا حکم دے دیا

عالمی عدالت انصاف نے اپنے ایک تاریخی فیصلے میں میانمار کے روہنگیا مسلمانوں کی سرکاری سرپرستی میں ہونے والی نسل کُشی اور ان پر ریاستی ظلم و تشدد روکنے کا حکم جاری کر دیا۔ یہ فیصلہ میانمار کی غیر فعال وزیراعظم آن سان سوچی کے اس بیان کے بعد جاری کیا گیا جس میں انہوں نے اپنے ملک کا دفاع کرتے ہوئے کہا تھا کہ میانمار کی فوج نے شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کی تھی۔ آن سان سوچی دسمبر میں عالمی عدالت انصاف کے سامنے پیش ہوئیں تھیں اور اپنے ملک کی فوج کے روہنگیا کے مسلمانوں پر ظلم و تشدد اور ان کی نسل کُشی کا دفاع کیا تھا۔ 2017 سے اب تک میانمار میں ہزاروں روہنگیا مسلمانوں کو فوج نے قتل کیا اور سات لاکھ مسلمانوں کو بنگلہ دیش ہجرت پر مجبور کیا۔ اقوام متحدہ کے تفتیش کاروں نے عالمی عدالت انصاف کو بتایا کہ میانمار مسلمانوں کی نسل کُشی اور ظلم و تشدد کا راستہ دوبارہ اپنا سکتی ہے۔ عالمی عدالت انصاف میں روہنگیا مسلمانوں پر ہونے والے ظلم و تشدد کا کیس افریقہ کے مسلمان ملک گیمبیا نے دائر کیا تھا جس میں موقف اختتیار کیا گیا تھا کہ میانمار کی فوجی حکومت نے ہزاروں مسلمانوں کا قتل عام کیا اور انہیں بنگلہ دیش میں ہجرت کرنے پر مجبور کیا تھا۔ عالمی عدالت انصاف کے سامنے میانمار کی غیر فعال وزیراعظم آن سان سوچی نے کہا تھا کہ مسلمانوں پر ہونے والا یہ ظلم میانمار کا اندرونی مسلح تصادم کا تنازعہ ہے۔ روہنگیا کے مسلمانوں نے فوجی چوکیوں پر حملے کئے جس کے جواب میں فوج نے کارروائی کی۔

یہ بھی چیک کریں

میانمار کے خلاف عالمی عدالت انصاف میں مسلمانوں کی نسل کشی پر مقدمہ شروع

میانمار کی وزیراعظم آنگ سان سوچی کو عالمی عدالت انصاف نے طلب کر لیا ہے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے