ہوم / بین الاقوامی / پاکستان بھارت کے ساتھ تمام معاہدے ختم کرے،سید علی گیلانی کا عمران خان کو آخری خط

پاکستان بھارت کے ساتھ تمام معاہدے ختم کرے،سید علی گیلانی کا عمران خان کو آخری خط

بھارتی تسلط کے خلاف کشمیر کی آزادی کی جنگ لڑنے والے 92 سالہ حریت رہنما سید علی گیلانی نے وزیراعظم عمران خان سے بھارت سے تاشقند، شملہ اور لاہور معاہدے کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ وزیراعظم کو لکھے گئے خط میں انہوں نے کہا کہ شائد یہ آپ کو میرا آخری خط ہے۔ سید علی گیلانی پچھلے کئی برسوں سے نظربند ہیں۔ انہوں نے اپنے خط میں کہا کہ جب بھارت نے تمام معاہدے توڑ دیئے ہیں تو پھر پاکستان کیوں ان کو سینے سے لگائے بیٹھا ہے؟ انہوں نے کشمیر کے ساتھ لائن آف کنٹرول کو دوبارہ سیز فائر لائن میں تبدیل کرنے کا مطالبہ کیا۔بھارت نے 5 اگست کو کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کر کے اسے دوبارہ 1947 والی حیثیت میں بدل دیا ہے۔ اب بھی کیا پاکستان کے پاس بھارت سے کئے گئے معاہدوں کی پاسداری کی کوئی گنجائش بچی ہے؟ آل پارٹیز حریت کانفرنس کے سربراہ علی گیلانی کا یہ خط مقبوضہ وادی میں کرفیو کے 100 دن مکمل ہونے کے بعد آیا ہے۔ خط میں انہوں نے پاکستانی اور بھارتی تسلط میں قید کشمیر کے درمیان کھینچی گئی لائن کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔بھارت نے اقوام متحدہ کی قراردادوں کو پھاڑ کر ردی کی ٹوکری میں ڈال دیا ہے اب پاکستان کی ذمہ داری ہے کہ وہ کمشیریوں کے حق خود ارادیت کیلئے جدوجہد کرے۔سید علی گیلانی نے کہا کہ اسے میرا آخری خط سمجھا جائے کیونکہ بیماری اور عمر کے اس حصے میں دوبارہ پاکستان سے رابطہ ممکن نطر نہیں آتا۔ انہوں نے عمران خان سے کہا کہ قوموں کی زندگی میں ایسے دور آتے ہیں جب بڑے فیصلے لینا ناگزیر ہو جاتا ہے اگر بروقت فیصلے نہ کئے جائیں تو قومیں تباہی کا شکار ہو جاتی ہیں۔ بھارتی حکومت کشمیر کے سیاسی کردار کو یکسر تبدیل کرنا چاہتی ہے اور کشمیریوں سے ان کی زمین چھینی جا رہی ہے۔ یہ  وہی صورتحال ہے جو فلسطینیوں کے ساتھ ہوا۔ ان کی زمینیں چھین کر انہیں اب ظلم و ستم کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ بھارت نے کشمیر کی حیثیت بدل کر جنگ کا اعلان کر دیا ہے۔ اب پاکستان کو بھی ایسا ہی جواب دینے کی ضرورت ہے اور کشمیری ہر طرح کے حالات کا مقابلہ کرنے کیلئے بالکل تیار ہیں۔

یہ بھی چیک کریں

جج ارشد ملک ویڈیو اسکینڈل:نواز شریف کی سزا کے خلاف درخواست سماعت کیلئے منظور

نیب کے سابق جج ارشد ملک کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد نواز شریف نے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے