ہوم / تازہ ترین / نواز شریف کو علم ہی نہیں وہ علاج کے لیے باہر جارہے ہیں،کچھ ہو گیا تو ذمہ دار الزام سے بچ نہیں پائیں گے

نواز شریف کو علم ہی نہیں وہ علاج کے لیے باہر جارہے ہیں،کچھ ہو گیا تو ذمہ دار الزام سے بچ نہیں پائیں گے

میاں نواز شریف کے انتہائی اہم اور قریبی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ میاں نواز شریف کو علاج کے لیے بیرون ملک لے جانے کی اطلاع نہیں ہے۔ وہ اس وقت اس قابل نہیں ہیں  کہ وہ اپنے علاج کے لیے باہر جانے یا نہ جانے کا فیصلہ کرسکیں۔ ان ذمہ دار ذرائع نے دعویٰ کیا ہے میاں نواز شریف کے بعض انتہائی قریبی ساتھیوں نے عدالت سے ضمانت پر رہائی کے بعد میاں نواز شریف سے ملاقات کی درخواست کی تھی۔ شریف خاندان نے یہ کہہ کر معذرت کی کہ میاں صاحب کا نظام مدافعت اس قدر کمزور ہے کہ وہ نہ بات کر پاتے ہیں اور نہ ہی وہ مکمل ہوش میں ہیں۔  ڈاکٹروں نے نواز شریف سے ملاقات پر مکمل پابندی عائد کر رکھی ہے۔ ذرائع کے مطابق سابق وزیراعظم نواز شریف کی تشویش ناک علالت دیکھ کر ہی میاں صاحب کا خاندان نواز شریف کی جان بچانے کی کوششوں کے لیے اسٹیبلشمنٹ کی بات ماننے پر تیار ہوا ہے۔ اس سے پہلے کہ میاں نواز شریف کی زندگی مکمل خطرے میں پڑ جائے انہیں انکی زندگی بچانے کی آخری کوشش کرتے ہوئے بیرون ملک لے جایا جائے۔ میاں نواز شریف کے ذرائع کہتے ہیں میاں صاحب کی حالت عوام کے علم میں ہے اور پاکستان میں افواہ سازوں کی اس افواہ پر کسی کو یقین نہیں کہ میاں صاحب کسی ڈیل کے نتیجے میں علاج کے بہانے ملک سے باہر جارہے ہیں۔ ذرائع کہتے ہیں اوّل تو ابھی یہ بھی نہیں کہا جاسکتا کہ وہ بیرون ملک علاج کے لیے جا بھی رہے ہیں یا نہیں۔ متوقع طور پر انہیں پہلے لندن یا نیویارک لے جایا گا کیونکہ ان کے ڈاکٹروں کا کہنا ہے جب تک میاں صاحب کے پلیٹلیٹس کی تعداد پچاس ہزار سے کم ہے وہ ہوائی سفر کرنے کے قابل نہیں ہوں گے۔ تاہم اگر وہ چلے بھی گئے تو سیدہے ہسپتال جائیں گے۔ اور اگر اللہ نے انھیں نئی زندگی عطا کی تو ہسپتال سے نکل کر زیادہ سے زیادہ ایک ہفتہ بیرون ملک قیام کریں گے اور پھر وطن واپس آجائیں گے۔  ان ذرائع کا کہنا ہے اگر اسٹیبلشمنٹ یہ سمجھتی ہے میاں نواز شریف کے باہر جانے سے جہاں ایک طرف اس کے سر سے یہ خطرہ ٹل گیا ہے کہ اگر جیل میں یا حکومت کی نگرانی میں کسی ہسپتال میں زیر علاج  میاں نواز شریف کی زندگی کے ساتھ کوئی حادثہ پیش آجاتا ہے تو الزام اسٹیبلشمنٹ اور خان حکومت کے سر جاتا۔ باہر جاکر ایسا کچھ ہو بھی جائے تو حکومت اور اسٹیبلشمنٹ بری الذمہ ہوجائے گی۔  تو یہ خان حکومت اور اسٹیبلشمنٹ کی خام خیالی ہے  پاکستانی عوام ہی نہیں پوری دنیا جانتی ہے اصل سچائی کیا ہے۔ ادھر تازہ ترین اطلاعات کے مطابق شہباز شریف اتوار کو میاں نواز شریف کو لیکر لندن کے لیے روانہ ہورہے ہیں جہاں انکے علاج کے لیے ہسپتال منتخب کرکے تمام تیاریاں کرلی گئیں ہیں۔

یہ بھی چیک کریں

رباّ میرے حال دا محرم تُوں

تحریر: نذر محمد چوہان (نیوجرسی) ہر تہذیب اپنے ہی گند تلے آ کر تباہ ہوئی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے