اہم ترین
ہوم / بین الاقوامی / جمعیت علمائے ہند نے بابری مسجد کیس پر نظرثانی اپیل دائر کر دی

جمعیت علمائے ہند نے بابری مسجد کیس پر نظرثانی اپیل دائر کر دی

جمعیت علمائے ہند نے بھارتی سُپریم کورٹ میں بابری مسجد کیس کے فیصلے کے خلاف نظرثانی اپیل دائر کر دی۔ جمعیت نے اپیل میں استدعا کی ہے کہ بابری مسجد کی جگہ رام مندر بنانے کے فیصلے کو منسوخ کیا جائے اور اپیل کے فیصلے تک حکم امتناعی جاری کیا جائے۔ 2.77 ایکڑ پر پھیلے رقبے پر صدیوں سے بابری مسجد تعمیر تھی جسے 1992 میں بھارت کے سابق وزیراعظم ایل کے ایڈوانی نے دیگر انتہاپسند ہندووں کے ساتھ مل کر شہید کر دیا تھا جس کے نتیجے میں ملک بھر میں ہندو مسلم فسادات پھوٹ پڑے تھے اور ہزاروں افراد ان فسادات میں جاں بحق ہو گئے تھے جن میں اکثریت مسلمانوں کی تھی۔ 9 نومبر کو سُپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے ایودھیا میں زمین کے تنازعے کا ایک متنازعہ فیصلہ سنایا تھا جس میں بابری مسجد کی جگہ رام مندر بنانے کا حکم دیا گیا تھا اور بابری مسجد کیلئے علحیدہ سے 5 ایکڑ زمین دینے کی ہدایت کی تھی۔

 جمعیت علمائے ہند کے بعد آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ بھی 9 دسمبر سے پہلے اس فیصلے کے خلاف ایک نظرثانی اپیل دائر کرنا چاہتا ہے۔ سُنی وقف بورڈ بھی اسی فیصلے کے خلاف عدالت میں اپیل دائر کرنے کا سوچ رہا ہے۔ بھارتی سُپریم کورٹ نے اپنے متنازع فیصلے میں تسلیم کیا تھا کہ بابری مسجد کو شہید کرنا ایک جُرم تھا لیکن اس کے باوجود عدالت نے بابری مسجد کی جگہ رام مندر بنانے کا فیصلہ جاری کیا۔

یہ بھی چیک کریں

بھارتی سپریم کورٹ کے فیصلے نے ’’ہندوتوا‘‘ کی بنیاد کو مزید مضبوط کیا،واشنگٹن پوسٹ

مضمون: راعنا ایوب (واشنگٹن) امریکہ میں مجھ سمیت لاکھوں بھارتیوں نے 9 نومبر کو بھارتی …

تری لوکی ناتھ پانڈے:ایودھیا کے مقدمے کا اصل فاتح

پچھلے دس سال سے زائد عدالت کے سخت اور کھردرے بینچوں پر بھیٹنے والا تری …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے